Friday, 29 April 2016

اکثر

ضمیر اٹھاتا ہے ایسے سوالات اکثر
نہیں ملتے جن کے جوابات اکثر
محسوس کرنے کی عادت بنائو
بیان نہیں ہو پاتے جذ بات اکثر
جیت کر بھی ہارنا پڑتا ہے
کر دیتے ہیں مجبور حالات اکثر
رونق محفل ہوتے ہیں جو دن کو
تنہا گزارتے ہیں رات اکثر
وفا شرط نہیں اک روایت ہے
اور ٹوٹ جاتی ہیں روایات اکثر
وہ نہ آئیں گے لوٹ کر شاہیں
رلاتے ہیں جن کے خیالات اکثر

Tuesday, 5 April 2016

ميں باغی ھوں

جو شروحيا سے عاری ھو اس ثقافت سے باغی ھوں
جو طواف کی صورت بکے اس عدالت سے باغی ھوں
جو حق کی تا ئید نہ کر سکے اس صحافت سے باغی ھوں
جو غریبوں کا خون پیئے اس امارت سے باغی ھوں
جو ملک وملت کو بدنام کرے اس شہرت سے باغی ھوں
موجودوحاضر سے جو بیزار نہ کرے اس امامت سے باغی ھوں
جو غیرت سے خالی ھو اس شرافت  سے باغی ھوں
حق کے خلاف ھونے والی ہر بغاوت سے باغی ھوں

انسانیت سے خالی ہر انسان سے باغی ھوں
ایمان سے خالی ہر مسلمان سے باغی ھوں
نا انصافی کے ہر فرمان سے باغی ھوں
اس ملک کے ہر حکمران سے باغی ھوں
میں عشق ومحبت اور وفا سے باغی ھوں
اپنے دیس کی سزاوجزا سے باغی ھوں
جس کا قافلہ لٹ گیا اس رہنما سے باغی ھوں
تقلید کرتی اس قوم کی ہر ادا سے باغی ھوں

نفرت کے زیرسایہ ہر دل سے باغی ھوں
تنقید ہے جس کا شیوہ اس عقل سے باغی ھوں
چمن سے باغی ھوں گل سے باغی ھوں
محفل میں بیٹھا ھوں مگر اہل محفل سے باغی ھوں
ظلم وستم کی سیاہ رات سے باغی ھوں
دل توڑنے والی ہر بات سے باغی ھوں
میں اپنے ہی خیالات سے باغی ھوں
شاہیں میں اپنی ذات سے باغی ھوں

Friday, 11 March 2016

تحفظ خواتين بل


گھر ميں اب اسي کي اجاراۃداري ھو گي
بيوي ظالم ھو گا اب شوہر بيچاري ھو گي
’رات گئے کيوں لوٹي ھو؟‘جو پوچھا تو بيٹي بولي
خبردار جو کچھ کہا تو ورنہ بہت خواري ھو گي
بھائي نہيں روکے گا,ھے بہن اس بات پہ خوش کہ
اب سرعام بوائےفرينڈز کے ساتھ خريداري ھو گي
ترقي کرني ھےشرم و حيا کيا کرنا ھے ’شاھين‘
بس آج سے ہي ان قوانين کي پاسداري ھو گي۔۔۔۔۔
محمد اقبال شاہين

Wednesday, 9 March 2016

Mumtaz Qadri

Ye Hub-e-Rasool(SAW) ka he kamal ho ga,
Mumtaz tera ye  karnama be.misaal ho ga,
Aj sab zabanen band karwa di han Mumtaz ne,
kise pata tha k tere ishq mein itna jalaal ho ga,
kbhi Ilam-ul-deen, kbhi Amir aor aj phr Mumtaz,
Ashiq-e-Mustafa(SAW) jo bhi ha laa-zawal ho ga,
Mumtaz ne aj phr ye he  sabat kiya ha "shaheen",
k gustakh-e-Rasool(SAW) ka bachna muhaal ho ga

Sunday, 28 February 2016

Tribute to GHAZI_MUMTAZ_QADRI


 Ehad-e-wafa kiya khoob nibhaya Tu ne, 
Shama-e-Ishq ko phr se jalaya Tu ne, 
Gustakh-e-Rasool(SAW) ki saza,sar tan se juda, 
Dunia ko phr aik baar Bataya Tu ne,
 Na-waqif hone lage thy muhabat se log, 
Sabaq Ishaq ka khoob parhaya Tu ne, 
Khiza'n raseeda hone laga tha chaman ye,
 aaee'n waqat pr khushbu se mehkaya Tu ne, 
Mudaton rahen ge ye qissy Teri Jurrat ke, 
Dekh kar phanda, naarra-e-ishq lagaya Tu ne,
"Shaheen" ha madah-khaw'an tera us din se,
 Jab se aik shetaan ko maar giraya Tu ne, 
Muhammad Iqbal Shaheen

Qitah

kuch es liye bhi darta hon qarib ane se,
k phr bicharna dushwar ho jata ha,
nahi smjhta ye dil to bacha ha,
or bachy ko parai chez se bi pyar ho jata ha,
mein hon buzdil k ruswai se darta hon,
aor aashiq to ruswa sar-e-bazaar ho jata ha,
“shaheen” nigahen to ab chura k guzarta hon,
ahh! Bebasi, k khawab me didar ho jata ha,

Ghazal

Zakhmon pe ab marham lagaa na leen,
ye jaan bhi ab us pe lutaa na leen,
Ehad jo kiya tha roz-e-azal un se,
sochta hon ab use nibhaa na leen,
ek mudat se tarap rahi han ye ankhen,
kar deed ka ab koi taqaza na leen,
Andhera bohat ha tere may-khany me saqi,
kaho to ham dil apna jalaa na leen,
wafa ha kul ponji, ese bech kar “shaheen”
ham hbi ab gharib-khana sajaa na leen,,